ٹا پ نیوز

اہم خبریں

Web Design Trends

  

Free Bootstrap Seminar

  

لکھاری


اشتہارات

Advertisement
Advertisement

کالمز

2 months ago

دائرہ (اپنے بچوں کو سمجھیں !)

نصرت سرفراز    خبریں   

پلے گروپ یا نر سری میں پڑ ھنے والے بچے عموماً شروع کے دنوں میں اسکول جا نا پسند نہیں کر تے انہیں ماں سے دور جانے کا خوف ہو تا ہے گھر کے ما حول سے نکل کر اسکول جانے تک کا خوف ابتدائی دنوں میں ایک معمول کی بات ہے لیکن اگر یہ حا لات ایک ہفتے سے زیا دہ بر قرار رہیں تو یہ ایک خطر نا ک صورت حال کی نشاندہی ہے اور والدین کو معاملا ت کے دوسرے پہلوؤں پر غور کر نے کی ضرورت ہے۔اسی طر ح اسکول نہ جانے کا موڈ ہو نے کا دوسرا دورانیہ یکم سے جما عت ہشتم تک محیط ہو تا ہے۔ اب بچہ سمجھدار ہے اور اسکول نہ جانے کا کوئی ممکنہ بہترین بہا نہ تلا ش کر تا ہے اکثر والدین ان بہا نوں کو سچ مان لیتے ہیں جما عت دہم سے آگے نئے نئے نو جوانی کی دہلیز پر قدم رکھتے بچے ان کی دو علا مات ہیں یا تو وہ اسقدر پنکچو ئل ہو جا تے ہیں کہ کسی شدید ضرورت کے تحت بھی چھٹی کر نا پسند نہیں کر تے اور ضرور اسکول /کالج جانا چاہتے ہیں اسی طر ح بعض اوقات بہانہ بنا دیتے ہیں کہ آج پر یکٹیکل نہیں ہے فلاں سر یا ٹیچر کی کلاس نہیں ہے تو نہیں جا نا ہے۔

2 months ago

سیاسی حرکیات کی تفہیم

Khursheed Nadeem    خبریں   

کیا آپ نے مولانا حسین احمد مدنی کی خود نوشت سوانح ''نقشِ حیات‘‘ پڑھی ہے؟
کیا مولانا ابوالکلام آزاد کی (India Wins Freedom) آپ کی نظر سے گزری ہے؟
کیا آپ کو مولانا عبداللہ لغاری کے قلم سے نکلی ہوئی ''مولانا عبیداللہ سندھی کی سرگزشتِ کابل‘‘ کے مطالعے کا موقع ملا ہے؟
ان سوالات سے خدانخواستہ آپ کا امتحان لینا مقصود نہیں۔ مقصد کچھ اور ہے، جس کا ذکر میں چند سطروں کے بعد کروں گا۔
مولانا ابوالکلام آزاد جب ہندوستان کے علمی و سیاسی افق پر نمودار ہوئے تو ان کے جاہ و جلال کا رنگ ہی کچھ اور تھا۔ مسلمانوں نے جانا کہ کوئی ان کی عظمتِ رفتہ کو آواز دے رہا ہے۔ انہیں خیال ہوا کہ قرنِ اوّل کا کوئی ہیرو کتابوں کے اوراق سے نکل کر، ان کی آنکھوں کے سامنے آ کھڑا ہوا ہے۔ 'ہندوستان میں حکومت ِالہیہ کا قیام‘... کیا شاندار نعرہ تھا جو اہلِ اسلام کے کانوں سے ٹکرایا اور ان کی سماعتوں کو مسحور کر گیا۔ اہلِ علم نے محسوس کیا کہ ابن تیمیہ اور صلاح الدین ایوبی ایک قالب میں ڈھل گئے ہیں۔ شیخ الہند جیسے رجلِ رشید نے گمان کیا کہ وہ امامِ وقت آ گیا ہے جس کا انتظار تھا۔............

2 months ago

سیاسی حرکیات کی تفہیم

Khursheed Nadeem    خبریں   

کیا آپ نے مولانا حسین احمد مدنی کی خود نوشت سوانح ''نقشِ حیات‘‘ پڑھی ہے؟
کیا مولانا ابوالکلام آزاد کی (India Wins Freedom) آپ کی نظر سے گزری ہے؟
کیا آپ کو مولانا عبداللہ لغاری کے قلم سے نکلی ہوئی ''مولانا عبیداللہ سندھی کی سرگزشتِ کابل‘‘ کے مطالعے کا موقع ملا ہے؟
ان سوالات سے خدانخواستہ آپ کا امتحان لینا مقصود نہیں۔ مقصد کچھ اور ہے، جس کا ذکر میں چند سطروں کے بعد کروں گا۔
مولانا ابوالکلام آزاد جب ہندوستان کے علمی و سیاسی افق پر نمودار ہوئے تو ان کے جاہ و جلال کا رنگ ہی کچھ اور تھا۔ مسلمانوں نے جانا کہ کوئی ان کی عظمتِ رفتہ کو آواز دے رہا ہے۔ انہیں خیال ہوا کہ قرنِ اوّل کا کوئی ہیرو کتابوں کے اوراق سے نکل کر، ان کی آنکھوں کے سامنے آ کھڑا ہوا ہے۔ 'ہندوستان میں حکومت ِالہیہ کا قیام‘... کیا شاندار نعرہ تھا جو اہلِ اسلام کے کانوں سے ٹکرایا اور ان کی سماعتوں کو مسحور کر گیا۔ اہلِ علم نے محسوس کیا کہ ابن تیمیہ اور صلاح الدین ایوبی ایک قالب میں ڈھل گئے ہیں۔ شیخ الہند جیسے رجلِ رشید نے گمان کیا کہ وہ امامِ وقت آ گیا ہے جس کا انتظار تھا۔.............

9 months ago

قومی ریاست کا زوال؟

Khursheed Nadeem    Lahore    خبریں   

کیا دنیا ایک عالمگیر حکومت کی طرف بڑھ رہی ہے؟ قومی ریاست کا تصورکیا اب قصۂ پارینہ ہے؟
تبدیلی کا عمل اس تیزی کے ساتھ آگے بڑھ رہا ہے کہ اسے کسی نظری ڈھانچے (Discourse) میں بدلنا آسان نہیں۔ کم و بیش ایک سو امریکی کمپنیاں صدر ٹرمپ کے اس اندازِ نظر کے خلاف متحد ہو گئی ہیں جو انہوں نے تارکین وطن کے باب میں اختیار کیا ہے۔ سرمایہ اگر سیاست و معاشرت کی صورت گری کرے گاتو پھر ریاست کو اس کے مفادات کے تابع ہونا پڑے گا۔ ٹرمپ جو خود ایک سرمایہ دار ہیں، انہیں یہ بات سمجھ نہیںآ رہی

9 months ago

رائے ساز

Khursheed Nadeem    Lahore    خبریں   

رائے ساز
اکثرخیال ہوتا ہے کہ رائے ساز ی کو کسی معیار کا پابند بنانا چاہیے، قانون کے ذریعے یا پھرسماجی رویے سے۔
جو آدمی سماجی علوم کے مبادیات سے واقف نہ ہو،کیا اسے یہ حق مل جانا چاہیے کہ وہ سیاست ومعاشرت پر عوام کی رائے سازی کرے؟ کیا لکھنے کے لیے محض ایک قلم اور ایک کاغذ بہت ہیں؟ کیا مذہب و تاریخ سے مکمل لاعلمی کے ساتھ کسی کو یہ حق دے دینا چاہیے کہ وہ ٹی وی سکرین پر جلوہ افروز ہو اور عوام کے جذبات سے کھیلتا رہے؟ کیا سماج اور ریاست کا فرق جانے بغیر، حالاتِ حاضرہ پر بات ہو سکتی ہے؟

9 months ago

اخلاقی جارحیت

سید منظور الحسن    خبریں   

اخلاقی جارحیت - سید منظور الحسن

اخلاقی جارحیت
[جناب جاوید احمد غامدی کی ایک گفتگو سے ماخوذ]
حقوق کے تحفظ کے لیے ہم مسلمانوں کا لائحۂ عمل مسلح جارحیت ہے ۔ گذشتہ تین صدیوں سے ہم اسی پر کاربند ہیں۔ قوم کے مذہبی اور سیاسی پیشواؤں نے اسی کو اختیار کرنے کی تلقین کی ہے اور عوام الناس پوری دل جمعی سے اس پر عمل پیرا ہیں۔ اس کی روح یہ ہے کہ اگر ہم منتشر ہوں تو تشدد آمیز کارروائیوں کے ذریعے سے دنیا کو اپنے مسائل کی طرف متوجہ کریں اور اگر کچھ مجتمع ہوں تو جنگ و جدل سے اپنا حق حاصل کرنے کی جدوجہد کریں

9 months ago

پاکستان میں تبدیلی کی ضرورت

عباس بیگ    خبریں   

پاکستان میں تبدیلی کی ضرورت
ویسے تو تبدیلی کی ضرورت صرف پاکستان کو ہی نہیں بلکہ عمومی طور پر پوری دُنیا کو اور خصوصی طور پر دنیا کے اکثر ممالک کو اس کی اشد ضرورت ہے. اگرچہ تبدیلی محض کا عمل ہر جگہ اور ہر زمانے میں جاری و ساری رہتا ہے کیونکہ بقول اقبال رحمۃ اللہ علیہ ع ثبات اک تغیر کو ہے زمانے میں
اس تبدیلی محض کو ایک مثبت تبدیلی میں بدلنے کی ضرورت و اہمیت اس مختصر سے کالم کا موضوع بحث ہے. میں آپ کو پاکستان کی معاشی صورتحال سے آگاہ کرنے کے لئے نہیں بتاؤں گا کہ پاکستان کی فی کس آمدنی کتنی ہے.ایک بچہ جب پیدا ہوتا ہے تو وہ کتنے روپوں کا اس دنیا میں آنے سے پہلے ہی مقروض ہوتا ہے.عوام کو ہینے کا صاف پانی کس حد تک میسر ہے. بیروزگاری کی شرح آسمان کی کس بلندی کو چهو رہی ہے۔.

9 months ago

پاکستان کا بنیادی مسئلہ اور اس کا حل

Abbas Baig    خبریں   

پاکستان میں اس بات پر مکمل اتفاق ھے کہ مختلف وجوہات کی بناء پر عملی طور پر سول حکومت کے بہت سارے اختیارات اس کے اپنے ہی ایک ادارے کے پاس چلے گئے ہیں, بس فرق صرف یہ جمہوریت پسند اس حقیت کا اقرار افسوس اور دکھ سے کرتے ہیں اور “دوسرے” اس کا اظہار طنز اور خوشی سے کرتے ہیں.
یہ عجیب اور پیچیدہ صورتحال پاکستان کے اکثروبیشتر مسائل کی بنیادی وجہ ھے. ریاست کی پے پناہ طاقت جو خلقِ خدا کی زندگی کو آسان بنانے پر ہونی چاہئے وہ حکومتوں کو گرانے, بچانے اور بنانے پر صرف ہو جاتی ھے. لیکن بوجوہ اس پر بہت کم لکھا اور بولا جاتا ھے.

خبریں

تمام خبریں

Testimonials:

Chief Editor

Abbas Baig

Chief Editor

Discussion is the key to problem solving. I am obliged to promote Peace. Human Rights and Democracy is a way forward. Discussion is the key to problem solving. I am obliged to promote Peace. Human Rights and Democracy is a way forward. Discussion is the key to problem solving. I am obliged to promote Peace. Human Rights and Democracy is a way forward.

Chief Public Relation Officer

Dr. Iftikhar Ahmed

Chief Public Relation Officer

Discussion is the key to problem solving. I am obliged to promote Peace. Human Rights and Democracy is a way forward. Discussion is the key to problem solving. I am obliged to promote Peace. Human Rights and Democracy is a way forward. Discussion is the key to problem solving. I am obliged to promote Peace. Human Rights and Democracy is a way forward.

Web Developer

Muhammad Hussain

Web Developer

Discussion is the key to problem solving. I am obliged to promote Peace. Human Rights and Democracy is a way forward. Discussion is the key to problem solving. I am obliged to promote Peace. Human Rights and Democracy is a way forward. Discussion is the key to problem solving. I am obliged to promote Peace. Human Rights and Democracy is a way forward.

Chief Executive Officer

Waseem

Chief Executive Officer

Discussion is the key to problem solving. I am obliged to promote Peace. Human Rights and Democracy is a way forward. Discussion is the key to problem solving. I am obliged to promote Peace. Human Rights and Democracy is a way forward. Discussion is the key to problem solving. I am obliged to promote Peace. Human Rights and Democracy is a way forward.

رابطہ کریں

Contact Info.

If you have any questions suggestions ojbections or concerns regarding our work or stuff at our website, please do not hesitate to contact us.


Email: info@charismalive.com
Phone: 010-020-0340
Website: www.charismalive.com
Address: Location # 123, Main Market, 10620, London

Send Enquiry

Name

Email

Subject

Message

Security Code


Can't read the above security code? Refresh